” ” اولاد کی غلط تربیت کا انجام ” ” Attn Parents…………………….

305802113.gif

اولاد کی غلط تربیت کا انجام
 
ایک زمانہ تھا جب لوگ بیٹوں کی دعا کرتے تھے‘
 
ان سے بے پناہ محبتوں کا احساس ہوتا تھا
 
کہ وہ فرماں برداری اور خدمت کو اپنا مقصد حیات گردانتے تھے مگر اب بے جا لاڈ پیار‘ جائز ناجائز خواہشوں کو پورا کرنے والے والدین بیٹوں کی خدمت سے محروم ہوجاتے ہیں۔
اس میں کسی کا قصور نہیں صرف ان کی غلط تربیت کا قصور ہوتا ہے۔ ساتھ والے گھر سے زور شور سے چلانے کی آوازیں آرہی تھیں‘
 
صدیقی صاحب کے گھر سے اس قسم کی آوازوں کا آنا اب معمول
بنتا جارہا ہے۔
 
محلے والوں نے اب اس صورتحال پر غور کرنا چھوڑ دیا ہے۔
 
مگر میں  نے اپنی حساس طبیعت کی بناء پر پھرغور کرنا شروع
کردیتی ہوں۔
صدیقی صاحب اور ان کی بیوی قدسیہ خالہ دونوں بہت ملنسار لوگ ہیں ہم جب شروع میں یہاں شفٹ ہوئے تو قدسیہ خالہ کی اپنائیت نے ہی ہمیں اجنبیت کا احساس نہیں ہونے دیا۔ قدسیہ خالہ کے دو بیٹے اور تین بیٹیاں تھیں۔
 
دونوں بیٹے بڑی دعاؤں اور مرادوں کے بعد ہوئے تھے۔
 
اس بات کا دونوں کو بخوبی احساس دلایا گیا۔
آخرکار یہ ہوا کہ دونوں نے اپنے آپ کو کسی ریاست کا بادشاہ سمجھنا شروع کردیا اور والدین اور بہنیں انہیں زرخرید غلام لگنے لگے۔
صدیقی صاحب نے بارہا قدسیہ خالہ کو سمجھایا کہ بیٹوں کو اس قدر لاڈپیار نہ کرو ورنہ نقصان اٹھاؤ گی۔
بیٹیوں سے بھی پیار کیا کرو وہ خدمت کرتی ہیں۔
مگر قدسیہ خالہ نے ایک نہ سنی ہر بات پر ان کی ڈھال بن جایا کرتی تھیں۔ بیٹیوں کے ساتھ زیادتی کرکے وہ ان دونوں کی خواہشیں پوری کرتی تھیں۔
آخر صدیقی صاحب نے ہار مان کر خاموشی اختیار کرلی۔ بیٹوں کو اعلیٰ تعلیم دلوائی گئی‘
غرض ان کی ہر ضرورت کا خیال رکھا گیا۔ صدیقی صاحب نے ایک ایک کرکے دونوں بیٹوں کے ساتھ تینوں بیٹیوں کی بھی شادیاں کردی۔
تینوں بیٹیاں اپنے گھر کی ہوئیں تو صدیقی صاحب نے سکھ کا سانس لیا۔ انہوں نے قدسیہ خالہ کو ان کے بیٹوں کی ناز برداری اٹھانے کیلئے اکیلا چھوڑ دیا دو سال قبل ہی صدیقی صاحب وفات پاگئے۔اب بہو بیٹوں نے پر پرزے نکالنے شروع کیے۔
بڑے بیٹے عرفان کو باہر کی ایک فرم میں ملازمت کی آفرہوئی اور وہ بیوی سمیت لندن چلا گیا۔ قدسیہ خالہ کو دکھ تو بہت ہواکہ ان سے اجازت کی کسی نے ضرورت بھی محسوس نہیں کی۔
انہیں تو صرف جانے کی اطلاع دی گئی تھی۔ صدیقی صاحب کے جانے کے بعد تو وہ بجھ سی گئی تھیں مگر بیٹے کی دوری نے انہیں توڑ کر رکھ دیا۔
ابھی یہی غم کیا تھے کہ چھوٹے بیٹے کامران اور اس کی بیوی نے بھی اپنی اصلیت دکھانی شروع کردی۔
پہلا حملہ قدسیہ خالہ کے کمرے پر ہوا انہیں کمرے سے بے دخل کرکے چھوٹے سٹور نما کمرے میں جانا پڑا کیونکہ ان کے کمرے کو ڈرائنگ روم کا درجہ دیا جانا تھا۔
کام تو وہ پہلے بھی کرتی تھیں مگر بہو نے اب کچھ بھی کرنا چھوڑ دیا ہے۔
اس کے مطابق کہ سارا دن تو بچوں کے کاموں میں صرف ہوجاتا ہے تو قدسیہ خالہ گھریلو ملازمہ کے ساتھ دن بھر کاموں میں لگی رہتی ہیں اس پر بھی بہو بیٹے کے ماتھے کے بل کم نہیں ہوتے۔
ان کا بس چلے تو وہ قدسیہ خالہ کو ایدھی ہوم چھوڑ آئیں۔ بیٹیاں آتی ہیں اور ماں کی حالت زار پر دکھی ہوتی ہیں مگر وہ چھوٹے بھائیوں کو کچھ کہہ نہیں سکتیں کیونکہ انہیں یہ حق کبھی دیا ہی نہیں گیا تھا تو اب وہ کیا کرسکتی تھیں…؟
 
ماں کی دلجوئی کرکے وہ اپنے گھروں کو روانہ ہوجاتی تھیں کیونکہ بھابی کا موڈ انہیں دیکھتے ہی خراب ہوجاتا ہے۔ بہو بیگم بس صبح و شام ساس پر حکم چلاتی ہیں ذرا سی غلطی پر برا بھلا کہا جاتا ہے۔
 
بڑھاپے اور کمزوری کے باعث ان سے اب گھر کے کام بھی ڈھنگ سے نہیں ہوتے۔ فرصت کے کسی لمحے میں وہ اکثر میرے پاس آکر دل کا بوجھ ہلکا کرتی ہیں۔
 
میں انہیں دلاسہ دیتی ہوں ہمت بڑھاتی ہوں اور میں ان کے لیے دعا کے علاوہ کر بھی کیا کرسکتی ہوں۔ آج بھی کسی معمولی غلطی پر ان کی بہو نے انہیں خوب بُرا بھلا کہا اور بیٹے نے سب سن کر بھی ماں کی حمایت میں ایک لفظ نہ کہا کہ وہ ماں جو ہماری ڈھال بن جایا کرتی تھی وہ آج ہمارے آسرے پر ہے مگر اس کی آنکھوں پر خودغرضی کی پٹی بندھی ہوئی ہے اور وہ نجانے کب کھلے۔
 
قدسیہ خالہ کی باتیں سن کر میں دیر تک سوچتی ہوں کہ قدسیہ
خالہ نے غلط تربیت کرکے اپنے دونوں بیٹوں کوہاتھ سے نکال دیا۔ اگر وہ بے جا لاڈ پیار کی بجائے ذرا سی سختی سے کام لیتیں تو
شاید انہیں آج اپنی ذمہ داریوں کا احساس بھی ہوتا۔
قدسیہ خالہ کے حالات بیان کرنے کے بعد میں میں ان تمام ماؤں سے التجا کرتی ہوں کہ وہ خدارا اپنے بیٹوں کی تربیت سے غافل نہ ہوں۔ تربیت میں صرف لاڈ پیار‘ بے جا ضد پوری کرنا اور بے جا حمایت نہیں آتی بلکہ پیارو محبت سے انہیں یہ بتایا جاتا ہے کہ والدین اور بہنیں بھی ان کی ذمہ داری ہے۔
انہیں اچھا اورمہذب شہری بننے کے ساتھ اچھا بیٹا اور بھائی بھی بننا ہے نہ کہ صرف اچھا شوہر……!!!
 
غلط تربیت کے زیراثر انہوں نے بہنوں کو تو کیا ماں باپ کو بھی نظرانداز کردیا اوراپنی زندگیوں میں مگن ہوگئے مگر یہ بھول گئے کہ قدسیہ خالہ کو تو ان کی غلطی کی سزا تاعمر ملتی رہے
گی مگر انہیں مکافات عمل کا سامنا جب ہوگا تو وہ کیا کریں گے۔ کیا معافی مانگنے کیلئے وہ ہستی جس کے قدموں تلے جنت رکھ
دی گئی ہے وہ شاید دنیا میں نہ ہو۔
ایک غلط فہمی: ہمارے معاشرے میں کہا جاتا ہے کہ ہمارے
معاشرے میں تعلیم کی کمی کے باعث لڑائی جھگڑے ہورہے ہیں لیکن یہ غلط سوچ ہے بلکہ تعلیم تو عام ہے لیکن تربیت نہیں ہے۔ دوسرا تعلیم کا لفظ آتے ہی ہمارا دھیان دنیا کی طرف جاتا ہے تو اس تعلیم سے پیسہ تو آجاتا ہے لیکن تربیت صرف اور صرف دینی تعلیم سے ہی ہوتی ہے جو کہ والدین اور معاشرے میں سکون کا باعث بنتی ہے۔
 
Aulaad Ki Ghalat
 
Tarbiyat Ka Anjaam
 
 
 
Ek Zamana Tha Jab Log Betoun Ki Dua Karte the
Unse Bepanah Mohabbaat Ka Ehsaas Hota Tha
Ke Woh Farmabardari Aur  Qidmat Ko Apna Maqsad-E-Hayat Girdante The
Magar Ab Bejaa Laad Pyaar, Jayez Najayez Kwahishoun Ko Pora Karne Wale Waldein Betoun Ki Qidmat Se Mehroom Hojate Hain
 
Issme Kisi Ka Qasoor Nahi Sirf Unki Ghalat Tarbiyat Ka Qasoor Hota Hai
 
Sath Wale Ghar Se Zorr Shorr Se Chillane Ki Aawazein Aarahi Thi
 
Siddiqui Sahab Ke Ghar Se Iss Qism Ki Aawazoun Ka Aana Ab Mamool Banta Jaraha Tha
 
Mohelle Waloun Ne Iss Surat-E-Haal Par Ghour Karna Chord Diya Tha
 
Laikin Mein Apni Hissas Tabiyat Ki Wajhe Se Ussi Par Zyada Ghour Kiya Karti Thi…..
 
Siddiqui Sahab Aur Unki Biwi Gudsiya Qala Dono Bohut Milansaar Log Hain
Hum Jab Yahan Shift Hue Toh Shuru Me Qudsiya Qala  Ki Apnaiyat Ne Hi Humein Ajnabiyat Ka Ehsaas Nahi Hone Diya Tha
 
Qudsiya Qala Ki 3 Betiyan Aur 2 Bete The
Dono Bete Badi Duaoun Aur Muradoun Ke Baad Hue The
 
Iss Baat Ka Dono Ko Nujumi Ehsaas Dilaya Gaya Tha
Aqirkar Ye Hua Ki Dono Ne Apne Aapko Kisi Riyasat Ka Badshaa Samajhna Shuru Kardiya
Waldein Aur Bahenein Unhe Zarr Qareed Ghulaam Lagne Lage
 
Siddiqui Sahab Ne Barha Qudsiya Qala Ko Samjhaya Ke Betoun Ko Iss Qadr Laad Pyaar Naa Karo Warna Nuqsan Uthaogi
 
Betiyoun Se Bhi Pyaar Kiya Karo Wo Qidmat Karti Hain
 
Magar Qudsiya Qala Ne Ek Naa Suni Har Baat Par Unki Dhaal Bann Jaya Karti Thi
Betiyoun Ke Sath Zyadti Karke Wo Unn Dono Betoun ki Kwahishein Poora Kiya Karti Thi
 
Aaqir Siddiqui Sahab ne Haar Maankar Khamoshi Iqtiyaar Karli
 
Betoun Ko Aalaa Taleem Dilwayi Gayi
Unki Har Zaroorat Ka Qiyal Rakha Gaya
 
Siddiqui Sahab Ne Ek Ek Karke Dono Betoun Ke Sath Sath Teeno Betiyoun Ki hi Shadi Kardi
Teeno Betiyaan Apne Apne Ghar Ki Huin Toh Siddiqui Sahab Ne  Sukh Ka Saans Liya
 
Siddiqui Sahab Ne Qudsiya Qala Ko Unke Betoun Ki Naazbardariyaan Uthane keliye Unhe Akele Chordiya
 
Do Saal Qabl Siddiqui Sahab Wafaat Paagaye
 
Ab Bahoo Betoun Ne Par Purze Nikalne Shuru Kardiye
Bade Bete Irfan Ko Bahar Ki Ek Firm Me Mulazimat ki Offer Hui Toh Woh Biwi Bachoun Samet London Chala Gaya
 
Qudsiya Qala Ko Dukh Toh Bohut Hua Ke Unse Ijazat Ki Kisi Ne Zaroorat Bhi Mehsoos Nahi Ki
Unhe Toh Bass Jaane Ki itellah Dedi Gayi thi
 
Siddiqui Sahab Ke Jaane Ke Baad Toh Woh Bujh Si Gayi Thi magar Bete Ki Doori Ne Unhe Toddkar Rakh Diya
Abhi Yahi Gham Kya Kamm The Ke Chote Bete Kamran aur Uski Biwi Ne Bhi Apni Asliyat Dikhani Shuru Kardi
 
Pehla Hamla Qudsiya Qala Ke Kamre Par Hua
Unhe Unke Kamre Se Bedaqal Karke Chote Se Store Room Numa Kamre Me Jana Pada
Kyunke Unke Kamre Ko Drawing Room Ka Darja Diya Jana Tha
 
Bahoo Ne Ab Kuch Bhi Kaam Karna Chord Diya Tha Kyunke Usske Mutabiq Bachoun ke Kaamoun Me Hi Usska Saara Din Masroof Hoti Thi
 
Qudsiya Qala Pehle Saraa Kaam Kiya karti thi Ab Bhi Mulazima Ke Sath Saara Din kaam Me Uljhi Rehti Thi Phir Bhi Bahoo Bete Ke Maathe Ke Ball Kamm Nahi Hote The
 
Unka Bass Chale Toh Wo Qudsiya Qala Ko Olg Age Home Chord Aate
 
Betiyaan Aati Qudsiya Qala Ki Ye Halat Dekh Dukhi Hoti Magar Unhe Kuch Kehne Ka Haq Diya Hi Nahi Gaya Tha Ab Wo Kya Kar Sakti Thi
Maa Ki Diljoi Karke Wo Apne Apne Ghar Rawwana Hojati thi
 
Kyunki Bhabi Ka Mood Unhe Dekhte Hi Kharab Hojata Tha
 
Baho Begum Bass Saas  Par Hukm Chalti Zara Si Ghalti Per Unhe Bhala Bura Kaha Jaata Tha
 
Budhape Aur kamzoori ki Wajhe Se A Unnse Ghar Ke Kaam Bhi Theek Se Nahi Hopate The
 
Fursat Ke Kisi Lamhe Me Woh Mere Paas Aakar Dil Ka Boojh Halka Kar Jaya karti Thi
 
Mein unhe Dilasa Deti Hoon Himmat adhati Hoon Aur Dua Kiya Karti Hoon Mein Unke Liye Aur Kar Bhi Kya Sakti Hoon
 
Aaj Bhi Kisi Mamooli Ghalti Par Unki Bahoo Ne Unhe Khoob Bura Bhala Kaha
Aur Bete Ne Sab Sunkar Bhi  MAA Ki Himayat Me Ek Lafz Naa Kaha
Ke Woh MAA Jo Hamesha Usski Dhaal Banjaya Karti Thi …..
Woh Aaj Humare Aasre Par Hai
Magar Aaj Bete Ki Aankhoun Par Khudgarzi Ki Patti Bandhi Hui Hai Aur Naajane Kab Khulegi !!!!
 
Qudsiya Qala Ki Saari Baatein Sunnkar Mein Deir Tak Sochti Rehti Hoon Ke
 
Qala Ne Betoun Ki Ghalat Tarbiyat Karke
Dono Betoun Ko Apne Hath Se Nikal Jaane Diya
Agar Woh Bejaa Laad Pyaar Ke Bajaye Saqti Se Kaam Leti Toh Shayed Aaj Dono Betoun ko Apni Zimmedariyoun Ka Ehsaas Bhi Hota
 
Qudsiya Qalaa Ke Halaat Bayaan Karne Ke Baad
Mein Unn Tamaam Maaoun Se iltejaa Karti Hoon
Khudara Apne Betoun Ki Tarbiyat Se Ghafil Naa Ho
Tarbiyat Me Sirf Laad Pyaar beja Zidd  Poori Karna Aur Bejaa Unki Himayat Nahi Aati Balke
Pyaar Wo Mohabbat Se Unhe Ye Bataya Jaye ki Waldein Aur Bahene hi Unki Zimmedari Hai
 
Unhe Acha Aur Mohzib Shehri Banne Ke Sath Sath Ek Acha Bhai Ek Acha Beta Bhi Banna Zaroori Hai Naa Ki Sirf Shouhar !!!!!!!
 
Ghalat Tarbiyat Ke Zair-E-Asar Unho ne Bahenoun Toh Kya MAA Baap Ko Bhi Nazar Andaaz  Kardiya …….Aur Apni Zindagiyoun Me Magan Hogaye …. Aur Iss Ghalti Ki Sazaa Qudsiya Qala Ko Taaumr Milti Rahegi……
 
Betoun Ke Uss Aamaal Ki Sazaa Ka Saamna Hoga Toh Kya Maafi Maangne Keliye Woh Hasti Milegi……………..
 
Jiske Qadmoun Tale Jannat Rakh Di Gayi Hai ???????
Jab Shayed Woh Iss Duniya Me Hi Naa Ho…..
 
Ek Ghalat Fehmi :-
Humare Ma’shire Me Kaha Jataa Hai Ke Humare ilm Ki Kami Ki Wajhe Se Ladai Jhagde Horahe Hain Laikin Ye Ghalat Soch Hai Taleem Toh Aam Hai Laikin Tarbiyat Nahi Hai….
Doosra Taleem Ka Lafz Aate Hi Humara Dhiyaan Duniya Ki Taraf Jataa Hai Toh Uss Taleem Se Paisa Toh Aajata Hai
Laikin Tarbiyat Sirf Aur Sirf Deeni Taleem Se Hi Hoti Hai
Jo Ke Ma’shire Aur Waldein Keliye Sukoon Ka Ba’as Banti Hai
 
Meri Aap Sabse Mo’dabana Guzarish Wo ilteja Hai Ki Apne Bachoun ko Deeni Taleem Zaroor Dijiye
 
iss Post Ko Padhne Keliye Apna Qeemti Waqt Dene Keliye Bohut Shukriya
 
 
Ya Allah ! Surely We Have Heard A Preacher Calling To The Faith, Saying : Believe in Your Allah, So We Did Believe; Ya Allah ! Forgive Us Therefore Our Faults, And Cover Our Evil Deeds And Make Us Die With The Righteous. Ya Allah ! Grant Us Good in This World And Good in The Hereafter, And Save Us From The Chastisement Of The Fire. Ya Allah ! Accept From Us ; Surely Thou Art The Hearing, The Knowing
 
Please Take A Moment To Forgive Me For All Mistakes
And Make Dua For Me If You Have Received Anything Of Benefit
Share This Post With Ur Family & Friends
Guiding One Soul To Knowledge And Faith Is A Momentous Achievement
It Is What Will Earn Us Great Blessings Insha Allah
May Allah Accept This Little Service From Us
Ameen Ya Rabbul Alameen !!!!!!
 
 
 
divider695.gif
 
Our Lord! grant us good in this world
and good in the hereafter, and save us from the chastisement of the fire
divider695.gif “Aao Lout chalain apne “RAB” ki taraf….!!” “SAJDAY MAI GIR KE MANAA LO APNE “RABB” KO…”
divider695.gif
 
 
 
اللهُمَّ صَلِّ عَلَى مُحَمّدٍ وَعَلَى آلِ مُحَمّدٍ كَمَا صَلَيْتَ عَلَى إِبْرَاهِيْمَ وَعَلَى آَلِ إِبْرَاهِيْمَ , إِنَّكَ حَمِيْدٌ مَجِيْدٌ …
 
اللهُمَّ بَارِكْ عَلَى مُحَمّدٍ وَعَلى آَلِ مُحَمّدٍكَمَا بَاركْتَ عَلَى إِبْرَاهِيْمَ وَعَلَى آَلِ إِبْرَاهِيْمَ , إِنّكَ حَمِيٍدٌ مَجِيْدٌ
divider695.gif please open this islamic web & 1 Million Darod Sharif event Read Darood Sharif And click button www.lifeforislam.com
divider695.gif
Darood Sharif   divider695.gif Aap Sabki Duaoun Ka Talib Ikram Cheema 
 
Cell #00965-65188442
“In This Life Nothing Happens Until You Make It It.”
divider695.gif Please Click to Join My Group http://groups.yahoo.com/group/life4islam/ divider695.gif Please check Our Blog For  Daily Ahadees And Islamic Information https://lifeforislam.wordpress.com/
   divider695.gif
 
Image
By lifeforislam

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s